میرا پیغام محبت ، امن اور مساوات تمام انسانیت کے لیے ۔ منجانب "فرخ صدیقی"

Wednesday, August 31, 2011

مرغا نمبر پانچ

اک  دل  پھینک  عاشق   گیا   معشوق  سے  ملنے  کو
سونے  کی  لاکٹ  بھی  لے  گیا   گفٹ  میں  دینے کو



قسمت  اچھی  تھی  گھر   میں   لیلیٰ   ہی  اکیلی  تھیں
جی  بھر  باتیں  کیں  اک  دوجے  کی تعریفیں کیں

عاشق  نے  چائے   کی  اک  خواہش  لیلیٰ  سے  کی
کب   انکار  تھا  لیلیٰ   کو   وہ  گفٹ  جو  پائی  تھی

کچن  میں  وہ  تو  چلی  گئیں    پھر  چائے   بنانے  کو
اور  یہ  ٹی وی  دیکھ  رہے   تھے   وقت   بتانے   کو

لیلیٰ  کے  موبائل  پے  جب  اک  نظر پڑی اس کی
سوچا  دیکھوں  سیف  مجھے  کس  نام  سے  کی  ہو گی

جانو   ہو گا   ،   جانم   ،      دلبر   ،   اونلی   ون    ہو گا
یا  مائی ڈیر  ،        ڈارلنگ  وار لنگ  ،   کچھ  ایسا   ہو گا

ڈائل   کیا   موبائل   سے  اپنے   نمبر  پر  اس  کے
بے تابی   کے  ساتھ  خوشی  کی  لہر  تھی  چہرے پے

دیکھا جب اسکرین پے  اس کے تن میں لگ گئی آنچ
لکھا    تھا    اس    پر    یہ    ” کالنگ مرغا نمبر پانچ“
شاعر :               محمد حامد/سلیم حامد۔                                     مجموعہ کلام  :        نامعلوم۔
انتخاب /ترتیب:  ابن ساحل۔(بہ کی بورڈ خود)

0 : : : ----- ((( تبصرے جات ))):

Post a Comment

خوش آمدید