میرا پیغام محبت ، امن اور مساوات تمام انسانیت کے لیے ۔ منجانب "فرخ صدیقی"

Wednesday, March 23, 2011

امی جان کے نا م !!!

لفظ’’ماں‘‘ دنیا کی کسی زبان میں بھی بولا جائے تو وہی چاسنی وہی مٹھاس دل کے نہاں خانوں کو باغ باغ کر جاتی ہے اور تقریباً دنیاکی جتنی بھی زبانوں میں اسے لکھا جائے اس میں ’’میم ‘‘کے صوتی اثرات پائے جائیں گے۔ ماں کا تعلق کسی بھی ملک و ملت سے ہو ،یا کسی بھی دین و مذہب سے ہوماں کی محبت  و الفت میں ذرا سی بھی ملاوٹ نہیں ۔بس ذہن میں یہ بات رہے کہ دنیا کی ماؤں کی جتنی محبت اپنے بچوں سے ہوتی ہے اللہ تعالیٰ اپنے بندے سے ستر ماؤں کی محبت سے زیادہ محبت کر تا ہے ۔
زیر نظر تصویر پاکستان کی آبادی کے لحاظ سے سب سے بڑے صوبے ’’پنجاب ‘‘کے دل لاہور کے نواحی علاقے  کے ایک قبرستان میں ایک پیاری ماں کی قبر کے سرہانے لگی ایک کتبے کی ہے جو کہ اس کے راج دلارے بیٹے کی طرف سے ماں کی خدمات کے اعتراف میں نصب کندہ ہے ۔

ماں تجھے سلام 
اُس رات سے میری ماں سوئی نہیں تابشؔ
اک رات میں نے کہا تھا کہ ’’ڈر لگتا ہے‘‘۔
 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
امی جان!!! آپ کی بہت یاد آتی ہے
 امی جان!!! آپ کی بہت یاد آتی ہے
امی جان!!! آج بھی ڈر لگتا ہے   ۔۔۔ 
امی جان !!! آج بھی لوری کے بغیر نیند نہیں آتی
امی جان !!!آج تک اُس لذت و سکون سے دل محروم ہے۔۔۔
 امی جان!!! آپ کی بہت یاد آتی ہے
امی جان!!! پچھلے جاڑے میں بھی رات بھر ٹھٹھرتا رہا کسی نے تجھ سا کمبل نہ اُڑایا
امی جان !!!شہر کے حالات خراب ہیں ، گھر سے نکلتے کوئی تجھ سا سر پہ رکھ کے ہاتھ دعا بھی نہ دیتا ہے
 امی جان!!! آپ کی بہت یاد آتی ہے
 امی جان!!! آپ کی بہت یاد آتی ہے
میری خواہش ہے کہ میں پھر سے فرشتہ ہو جاؤں
ماں سے اس طرح لپٹ جاؤں کے بچہ ہو جاؤں




23 مارچ
یوم    شھادت    امی جان !!!


دعا گو
ابن ساحل ۔کراچی

0 : : : ----- ((( تبصرے جات ))):

Post a Comment

خوش آمدید