میرا پیغام محبت ، امن اور مساوات تمام انسانیت کے لیے ۔ منجانب "فرخ صدیقی"

Thursday, March 17, 2011

سیب حرام ہے !!!



میں مسجد میں تحیۃ المسجد ادا کر رہا تھا کہ سگریٹ کی ناگوار بدبو نے مجھے بے چین کر کے رکھ دیا،خشوع و خضوع قائم رکھنا تو بعد کی بات تھی بدبو کی شدت سے نماز پوری کرنا بھی محال لگ رہا تھا۔سلام پھیر کر دیکھا تو قریب ہی ایک آدمی نماز  ادا کر رہا تھا۔ سگریٹ نوشی کی کثرت سے اس کے ہونٹ سیاہ پڑ چکے تھے۔میں نے سوچا یہ نماز سے فارغ ہو چکے تو اس سے بات کروں گا، شاید میری نصیحت سے اس پر کوئی مثبت اثر پڑ جائے۔
لیکن مجھے اس وقت حیرت کا سامنا کرنا پڑا جب اس شخص کے ساتھ بیٹھے ایک نوجوان نے اسک کی نماز سے فراغت پرمجھ سے پہلے ہی  اس سے گفتگو کرنا شروع کی، سننے کے لیے میں نے بھی کان لگائے تو کچھ اس قسم کی بات چیت ہو رہی تھی:
نوجوان: السلام و علیکم، چچا آپ کون ہیں؟
انجان آدمی: میں ۔۔۔۔۔ ہوں۔
نوجوان: چچا، کیا آپ نے شيخ عبدا لحميد كشك کا نام سنا ہے؟
انجان آدمی: جی، میں جانتا ہوں انہیں۔
نوجوان: اچھا تو آپ شيخ جاد الحق کو بھی جانتے ہونگے؟
انجان آدمی: جی، میں انہیں بھی جانتا ہوں۔
نوجوان: تو آپ شيخ محمد الغزالی کو بھی جانتے ہیں؟
انجان آدمی:  جی، میں انہیں بھی اچھی طرح جانتا ہوں۔
نوجوان: تو  پھر آپ ان کی کیسٹیں اور فتاویٰ جات بھی سنتے ہونگے ناں؟
انجان آدمی: جی، میں ان کی کیسٹیں بھی سنتا ہوں اور انکے فتاویٰ جات بھی۔
نوجوان: آپ جانتے ہیں ناں یہ سارے شیوخ سگریٹ کو حرام کہتے ہیں، تو پھر آپ کیوں پیتے ہیں سگریٹ؟
انجان آدمی: (جو  اب اس ساری گفتگو سے بیزاری سی محسوس کر رہا تھا) نہیں سگریٹ نوشی حرام  نہیں ہے۔
نوجوان: نہیں،  حرام ہے، اللہ تعالیٰ کا ارشاد بھی تو یہی ہے ناں کہ (پلید چیزوں کو تم پر حرام کر دیا گیا ہے)۔کیا کبھی سگریٹ شروع کرتے  وقت آپ نے بسم اللہ پڑھی ہے یا سگریٹ ختم ہونے پر الحمدللہ کہی ہے؟
انجان آدمی:  (تقریبا بھناتے ہوئے) مجھے قرآن شریف کی ایک آیت دکھا دو جس میں کہا گیا ہو کہ(ويحرم عليكم الدخان) اور ہم نے تم پر سگریٹ نوشی حرام قرار دی ہے۔
نوجوان: چچا یقین کیجیئے اسلام میں سگریٹ نوشی بالکل ویسے ہی حرام ہے جس طرح  سیب حرام ہے۔
انجان آدمی کا صبر کا پیمانہ لبریز ہی ہو چکا تھا، جھلاتے ہوئے خونخوار لہجے میں بولااوئے لڑکے، تو ہوتا کون ہے کہ جس چیز کو چاہے حرام قرار  دے اور جس چیز کو  چاہے حلال قرار دیدے؟
وہ نوجوان نہایت ہی تحمل سے بولا کہ پھر لایئے اک آیت جس میں لکھا ہو کہ(ويحل لکم التفاح) اور ہم نے تم پر سیب کو حلال کر دیا ہے۔
نوجوان کی گفتگو نے اس آدمی کو ششدر ہی کر کے رکھ دیا تھا، ایسا لگ رہا تھا کہ اب رویا کہ تب،مسجد میں اقامت کی آواز گونج اٹھی تھی اور لوگ جماعت کے لیے کھڑے ہو رہے تھے۔
نماز کے بعد وہ آدمی پھر اس نوجوان کی طرف متوجہ ہوا اور بولادیکھو نوجوان، میں اللہ کی قسم کھا کر کہتا ہوں کہ آئندہ کبھی سگریٹ نوشی نہیں کروں گا۔
سُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ وَبِحَمْدِكَ ، أَشْهَدُ أَنْ لا إِلهَ إِلَّا أَنْتَ أَسْتَغْفِرُكَ وَأَتْوبُ إِلَيْكَ .
مضمون نگار :  محمد سلیم صاحب ۔(عرف حاجی صاحب)
ادارہ’’سنپ‘‘ صاحب ِ مضمون کا ہمہ تن مشکور و ممنون ہے۔یاد آوری جاری رکھنے کی التماس۔[شکریہ]

0 : : : ----- ((( تبصرے جات ))):

Post a Comment

خوش آمدید